کپاس کی آئندہ فصل کو گُلابی سُنڈی کا حملہ

8-نومبر:2013

cotton-insects-attackلاہور:زرعی میڈیا ڈاٹ کام:کاشتکار کپاس کی آئندہ فصل کو گُلابی سُنڈی کے حملہ سے بچانے کے لیے موسم سرما میں سنڈی کی تلفی کے لیے بھرپور اقدامات کریں۔محکمہ زراعت پنجاب کے ترجمان کے مطابق گلابی سُنڈی نہ صرف کپاس کی پیداوار میں کمی کا باعث بنتی ہے بلکہ اس کی وجہ سے بدرنگ روئی اور کمزور ریشہ حاصل ہوتا ہے ۔ یہ سُنڈی سردیوں کا موسم دو بیجوں کو جوڑ کر ان کے اندر یا آخری چنائی کے بعد بچ جانے والے ان کھلے ٹینڈوں یا جننگ فیکٹریوں کے کچرا کے اندر گزارتی ہے۔لہٰذا موسم سرما میں گلابی سنڈی کے کنٹرول سے آئندہ کپاس کی فصل کو اس کے حملہ سے بچایا جا سکتا ہے ۔ترجمان نے مزید بتایا ہے کہ کپاس کی گُلابی سُنڈی کا کپاس کی فصل کے علاوہ کوئی دوسرا متبادل میزبان پودا نہیں ہے۔سردیوں میں سرمائی نیند سوئی ہوئی گلابی سُنڈی دو نسلوں کو جنم دیتی ہے۔پہلی نسل موسم بہار میں اور دوسری جون جولائی کے مہینوں میں ظاہر ہوتی ہے۔عرصہ دراز سے بہاریہ نسل کو مر جانے والی نسل کے نام سے جانا جاتا رہا ہے۔کیونکہ اس دوران کپاس کی فصل موجود نہیں ہوا کرتی تھی ۔مگر اب کپاس کی بے موسمی اگیتی کاشت کی وجہ سے کپاس کی گُلابی سُنڈی کی یہ نسل بھی زیادہ اہمیت اختیار کر گئی ہے جو با آسانی فروری مارچ کی کاشتہ فصل پر منتقل ہو سکتی ہے۔کپاس کی نئی نئی اقسام اور اس کی کاشت کے بدلتے ہوئے رحجان کی وجہ سے گُلابی سُنڈی کے تدارک کی اہمیت میں کئی گنا اضافہ ہوگیا ہے۔کپاس کی بی ٹی اقسام میں بی ٹی زہر کی مقدار چونکہ شروع موسم میں اور فصل کے آخری مراحل میں کم ہوجاتی ہے اس لیے اس دوران اس فصل پر بھی سُنڈیوں کا حملہ گو کہ معمولی نوعیت کا ہوتا ہے۔مگر اس کا مناسب تدارک بی ٹی زہر کے خلاف سنڈیوں میں قوت مدافعت کی شرح کو کم رکھنے کے لیے ضروری ہے اس سُنڈی کے تدارک کے لیے سردیوں کے موسم میں اور اس کے بعد کئی امور پر توجہ مرکوز کرنے کی ضرورت ہے۔

ترجمان کے مطابق آخری چنائی کے بعد کپاس کے کھیتوں میں بھیڑ بکریاں چرائیں ۔جیسے ہی وہ بچے کھچے ٹینڈے کھائیں گی تو ان میں موجود گلابی سُنڈی کی تلفی میں مدد ملے گی۔آخری چنائی کے بعد بچ جانے والے ٹینڈوں کو توڑ کر تلف کر دیں اور بعد میں چھڑیوں کی کٹائی اس طرح کریں کہ ان کو زمین کے اندر چھ انچ گہرائی سے کاٹا جائے تاکہ ان سے موسم بہار کی آمد پر نئی پھوٹ نہ نکل سکے ۔چھڑیوں کی کٹائی اور تلفی کا عمل 31جنوری تک ہر صورت مکمل کر لیں اور خالی کھیتوں میں گہرا ہل چلا کر سُنڈیوں کے پیوپے تلف کر دیں ۔کپاس کے خالی کھیتوں میں موسم بہار کی آمد سے قبل روٹا ویٹر یا مٹی پر پلٹنے والا گہرا ہل چلا کر کپاس کے مڈھوں اور خود رو جڑی بوٹیوں کو تلف کر دیں ۔چھڑیوں کو ہر صورت تلف کریں ،لیکن اگر ایندھن کے طور پر ان کورکھنا مقصود ہو تو چھوٹے چھوٹے گٹھے بنا کر دھوپ میں اس طرح رکھیں کہ ان کے مڈھ زمین کی طرف رہیں اور دھوپ لگنے سے باقی ماندہ ٹینڈوں سے گلابی سنڈی کے پروانے کپاس کی فصل سے قبل نکل کر ضائع ہو جائیں۔

Copy Rights @ ZaraiMedia.com

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More