ملک میں اب تک 5ہزار سے زائد مختلف فصلوں کی نئی اقسام متعارف کرائی گئی ہی: زرعی یونیورسٹی

zarai-university-fsd2013فیصل آباد 28 اکتوبر ( زرعی میڈیا ڈاٹ کام) ملک میں اب تک 5ہزار سے زائد مختلف فصلوں کی نئی اقسام متعارف کرائی گئی ہیں جن میں سے زیادہ تر اقسام زرعی یونیورسٹی فیصل آباد سے اکتساب فیض کرنے والے سائنسدانوں کی کاوشوں سے منظرعام پر آئیں۔ یہ بات زرعی یونیورسٹی فیصل آباد کے وائس چانسلر پروفیسر ڈاکٹر اقرار احمد خاں نے ایوب زرعی تحقیقاتی ادارہ فیصل آباد کے سابق ڈائریکٹر جنرل ڈاکٹر نورالاسلام خاں اور موجودہ ڈی جی ڈاکٹر عابد محمود کے اعزاز میں منعقدہ تقریب سے اپنے صدارتی کلمات کے دوران بتائی۔

انہوں نے کہا کہ مستقبل میں آبادی کے بڑھتے ہوئے سیلاب کو بھوک اور افلاس سے بچانے کے لئے تمام اداروں کو مل جل کر کوششیں بروئے کار لانا ہوں گی، اس مقصد کے لئے یونیورسٹی ایوب تحقیقاتی ادارے کے ساتھ مل کر بھرپور کوششیں بروئے کار لا رہی ہے ۔ وائس چانسلر نے کہا کہ فیصل آباد کے دونوں اداروں کے سائنسدانوں کے مابین دوستی اور باہمی تعاون کے ذریعے ملک میں زرعی انقلاب برپا کرنے کے لئے کامیابیاں سمیٹی جا سکتی ہیں۔ ڈی جی ایوب زرعی تحقیقاتی ادارہ ڈاکٹر عابد محمود نے کہا کہ اس ملک کی بقا اور خوشحالی زرعی شعبے کی ترقی کے ساتھ منسلک ہے لہٰذا اس شعبے کو نظرانداز کرنے کی بجائے اس میں بھرپور سرمایہ کاری اور مراعات کی ضرورت ہے۔ انہوں نے کہا کہ سائنسدانوں کو تحقیقی شعبے میں سہولتیں بہم پہنچا کر غذائی استحکام کے لئے روڈمیپ ترتیب دیا جا سکتا ہے۔

ڈاکٹر نورالاسلام خاں نے کہا کہ ان کے ڈائریکٹر جنرل شپ کے عرصہ کے دوران مجموعی طور پر ملک میں 50نئی ورائیٹیاں متعارف کرائی گئیں جن میں سے 38 ایوب زرعی تحقیقاتی ادارہ میں تیار کی گئی تھیں۔ انہوں نے کہا کہ اس وقت ملک بھر میں کاشت کی جانے والی کپاس کی مجموعی فصل میں سے 90فیصد رقبہ ایوب تحقیقاتی ادارے کے سائنسدانوں کی تیار کردہ کپاس کی اقسام پر مشتمل ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہمیں اب روایتی طریقے چھوڑ کر غیرروایتی اور ہائی ویلیو فصلات کی جانب آگے بڑھنا ہو گا اس مقصد کے لئے ویلیوایڈیشن کی اہمیت سے انکار نہیں کیا جا سکتا۔

سابق وائس چانسلر بارانی زرعی یونیورسٹی ڈاکٹر خالد محمود خاں نے کہا کہ ملک میں زرعی یونیورسٹیوں کی تعداد میں اضافہ کرنے کے ساتھ ساتھ صنعتوں اور صوبائی زرعی اداروں کے ساتھ ان کے مربوط روابط میں وسعت لا کر دیہی ترقی اور خوشحالی کے لئے نئے امکانات پیدا کئے جا سکتے ہیں۔

ڈین کلیہ زراعت پروفیسر ڈاکٹر محمد ارشد نے کہا کہ ویلیوایڈیشن وقت کی اہم ترین صرورت ہے اس وقت ملک میں ایک نجی کمپنی مکئی سے 62 مصنوعات تیار کر رہی ہے جبکہ امریکہ میں مکئی سے 400 سے زائد مصنوعات تیار کی جاتی ہیں۔ چیئرمین پلانٹ بریڈنگ اینڈجنیٹکس ڈاکٹر عبدالسلام خاں نے نئی ورائیٹیوں کے بارے میں مستقبل کے امکانات سے حاضرین کو آگاہ کیا۔ تقریب کی نقابت کے فرائض ڈائریکٹر تحقیق پروفیسر ڈاکٹر آصف علی نے ادا کئے۔

زرعی یونیورسٹی, زرعی, University of Agriculture Faisalabad (UAF), Agricultrue,
Copy Rights @ ZaraiMedia.com

زرعی یونیورسٹی, زرعی, University of Agriculture Faisalabad (UAF), Agricultrue,

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More