سائنسدان دالوں کی ایسی اقسام تیار کریں جو کیمیائی کھادوں کو بہتر انداز میں استعمال کرنے کی صلاحیت رکھتی ہوں

27 April 2013

Modern Pulses Cultivation
Modern Pulses Cultivation

لاہور:زرعی میڈیا ڈاٹ کام:ایوب زرعی تحقیقاتی ادارہ فیصل آباد کے سائنسدان دالوں کی ایسی اقسام تیار کریں جو کیمیائی کھادوں کو بہتر انداز میں استعمال کرنے کی صلاحیت رکھتی ہوں تاکہ دالوں کی فی ایکڑ پیداوار میں اضافہ کیا جاسکے۔ یہ بات ڈاکٹر نورالاسلام ڈائریکٹر جنرل زراعت ریسرچ پنجاب نے ایوب زرعی تحقیقاتی فیصل آباد میں خریف کی دالوں کے سالانہ تحقیقاتی پروگرام کی منصوبہ بندی کے لیے منعقدہ زرعی سائنسدانوں کے ایک اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہی۔ اجلاس میں ایوب زرعی تحقیقاتی ادارہ فیصل آباد کے زرعی سائنسدانوں کے علاوہ این اے آر سی اسلام آباد اور نیاب فیصل آباد کے دالوں پر تحقیق کرنے والے سائنسدانوں نے بھی شرکت کی۔ ڈاکٹر نورالاسلام نے دالوں کی نئی اقسام کی تیاری کے لیے جرم پلازم کوو سعت دینے اور اسے محفوظ کرنے کی ضرورت پر زور دیا اور کہا کہ دالوں کی بڑھتی ہوئی درآمدات ملکی خزانے پر بوجھ ہیں اور زرعی سائنسدانوں کو دالوں میں خود کفالت حاصل کرنے کے لیے اپنا کردار ادا کرنا چاہیے۔ اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے ڈاکٹر فیض احمد فیض ڈائریکٹر ادارہ تحقیقات دالیں نے آئندہ سال کے لیے دالوں کے تحقیقاتی پلان کی ترجیحات سے آگاہ کیا۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان میں دالوں کی پیداوار بڑھانے کی گنجائش بہت زیادہ ہے۔ ایوب زرعی تحقیقاتی ادارہ فیصل آباد کی تیار کی گئی موجودہ اقسام بھی زیادہ پیداوار دینے کی صلاحیت رکھتی ہیں اور نئی اقسام کی تیاری کے لیے تحقیقاتی کام جاری ہے۔ انہوں نے کہا کہ بدلتے ہوئے موسمی حالات کی وجہ سے دالوں کی پیداوار میں اتار چڑھاؤ ہے ۔ دالوں کی پیداوار کو مستقل بنیاد فراہم کرنے کے لیے سائنسدان ایسی اقسام کی تیاری میں مصروف ہیں جو کیڑوں اور بیماریوں کے خلاف قوت مدافعت رکھتی ہوں اور نامساعد موسمی حالات میں بھی زیادہ پیداوار دے سکیں۔

****

 

نظامت زرعی اطلاعات پنجاب

21۔ سر آغا خان سوئم روڈ لاہور

Pulses Cultivation

Copy Rights @Zaraimedia.com

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More