ویکسی نیشن میں جدیدطرز پر تحقیق سے ہی بیماریوں کا تدارک ممکن ہے۔ وائس چانسلر ویٹرنری یونیورسٹی

Research in Vaccinology
Research in Vaccinology

April 12, 2013

لاہور(زرعی میڈیا ڈاٹ کام) یونیورسٹی آف ویٹرنری اینڈ اینیمل سائنسزلاہورکے وائس چانسلر پروفیسر ڈاکٹر طلعت نصیرپاشا نے کہا ہے کہ جدید فارمنگ میں بیماری کا علاج سے پہلے کنٹرول وقت کی ضرورت ہے جو صرف ویکسی نیشن کے میدان میں بہتری اور مزید تحقیق سے ہی ممکن ہے۔

وہ گذشتہ روز’’جینیاتی مادے کی ردوبدل سے بننے والی ویکسین کی تیاری‘‘ کے حوالہ سے منعقدہ قومی ورکشاپ سے خطاب کررہے تھے انہوں نے کہا کہ پاکستان کو بیماریوں سے پاک سرزمین دیکھنے کا خواب ویکسی نیشن کے شعبہ میں مزید تحقیق اور جدید ٹیکنالوجی کے استعمال سے ہی شرمندہ تعبیر ہوسکتا ہے۔

آج کسی بھی پولٹری فارم میں ۳۰۰۰سے کم مرغیاں نہیں ہے اسی طرح ڈیری فارمزپر بھی جانوروں کی تعداد ۵۰۰ سے ۱۵۰۰۰ کے درمیان ہے جس سے اندازہ کیا جا سکتا ہے ویکسین کی وسیع مقدار میں ضرورت ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ صوبہ پنجاب میں منہ کُھر کی بیماری کے خلاف ویکسین کا استعال کل جانوروں کا صرف 2.5%ہے جبکہ بھارتی پنجاب میں یہی تناسب 100%ہے۔اس موقع پرڈائریکٹر انسٹیٹیوٹ آف بائیو کیمسٹری اینڈ بائیو ٹیکنالوجی ڈاکٹر طاہر یعقوب نے ورکشاپ کے اغراض و مقاصد پر روشنی ڈالی ۔

Livestock, Poultry, UVAS
Copyright: Zaraimedia.com

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More