زرعی یونیورسٹی فیصل آبادمیں سنٹر آف ریموٹ سینسنگ فار ایگرو انفارمیٹکس

زرعی یونیورسٹی فیصل آباد
زرعی یونیورسٹی فیصل آباد

فیصل آباد 18جنوری 2013ء ( ) زرعی یونیورسٹی فیصل آبادمیں سنٹر آف ریموٹ سینسنگ فار ایگرو انفارمیٹکس کا قیام جلد عمل میں لایا جائے گا تاکہ مقامی طو ر پر نوجوان افرادی قوت کی تیاری کے ساتھ ساتھ صوبائی حکومت کے کراپ رپورٹنگ سروے کے اہلکاروں کو اس نئی ٹیکنالوجی کے حوالے سے ضروری عملی تربیت فراہم کر سکے۔ اس بات کا انکشاف امریکی یونیورسٹی آف میری لینڈ کے سائنسدان یائن ڈیمپی وولف اور مسٹر جون نارڈنگ پر مشتمل امریکی ماہرین کی زرعی یونیورسٹی فیصل آباد کے وائس چانسلر ڈاکٹر اقرار احمدخاں سے ملاقات کے دوران ہوا۔ ملاقات کے بعد سنڈیکٹ ہال میں مجوزہ سنٹر کے حوالے سے یونیورسٹی ماہرین کے ساتھ منعقدہ تعارفی سیشن میں امریکی ماہر یائن ڈیمپسی وولف نے کہا کہ امریکی ادارہ برائے بین الاقوامی ترقی پاکستان میں قدرتی آفات بالخصوص سیلاب کے نقصانات کا جائزہ لینے کیلئے ریموٹ سنسنگ کے حوالے سے نوجوان طلبہ اور پنجاب حکومت کے کراپ رپورٹنگ سے متعلقہ سٹاف کی تربیت میں دلچسپی رکھتا ہے تاکہ ریموٹ سینسنگ تربیت حاصل کرنے والے سرکاری اہلکار نچلی سطح پر کسانوں کی موثر رہنمائی کر سکیں۔ انہوں نے کہا کہ گذشتہ کئی سالوں کے دوران موسمیاتی تبدیلیوں اور بارشوں کی زیادتی کے باعث پاکستان میں آنے والے سیلاب اور اس کے نتیجے میں ہونے والے نقصانات کا جائزہ لینے کے لئے جدید ٹیکنالوجی کی دستیابی اور تربیت یافتہ افرادی قوت کی تیاری وقت کی اہم ترین ضرورت ہے۔

یائن ڈیمپی وولف اور مسٹر جون نارڈنگ پر مشتمل امریکی ماہرین کی زرعی یونیورسٹی فیصل آباد
یائن ڈیمپی وولف اور مسٹر جون نارڈنگ پر مشتمل امریکی ماہرین کی زرعی یونیورسٹی فیصل آباد

انہوں نے کہا کہ امریکی یونیورسٹی آف میری لینڈ اس ضمن میں تعلیمی و تحقیقی سطح پر دستیاب سہولتوں کی فراہمی کے لئے اپنا کردار ادا کرے گی۔ان سے پہلے یونیورسٹی کے وائس چانسلر پروفیسرڈاکٹر اقرار احمد خاں نے کہا کہ جامعہ زرعیہ فیصل آباد دنیا کی اہم ترین یونیورسٹیوں اور سائنسی اداروں کے ساتھ مل کر مختلف تعلیمی پروگراموں کے لئے باہمی تعاون کو فروغ دے رہی ہے۔ اس ضمن میں یونیورسٹی آف میری لینڈ کے ساتھ ریموٹ سنسنگ کے حوالے سے تعاون پاکستان میں زرعی رقبہ جات پر موسمی اثرات اور سیلاب کے نقصانات کے تناظر میں اس کے جائزے کی صورت میں اہم سنگ میل ثابت ہو گا۔انہوں نے کہا کہ اگست کے مہینے میں آسٹریلین سنٹر برائے بین الاقوامی زرعی تحقیق (ACIAR) کے تعاون سے یہاں ایک پالیسی سنٹر قائم کیا جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ بدلتے ہوئے موسمی تغیرات اور خوراک کی بڑھتی ہوئی ضروریات کے تناظر میں زرعی سائنسدانوں کو پریسین ایگریکلچر پر توجہ دینا ہو گی۔ ڈاکٹر اقرار احمد خاں نے کہا کہ ہمیں مواصلاتی سیاروں اور دیگر آلات کی مدد سے نئے جدتوں کو اپناناہو گا۔ دو رکنی امریکی وفد نے یونیورسٹی کے ڈائریکٹر بیرونی روابط پروفیسرڈاکٹر اشفاق احمد چٹھہ ‘ ڈاکٹر اللہ بخش‘ ڈاکٹر سید آفتاب واجد‘ ڈاکٹر تسنیم خالق‘ ڈاکٹر محمد جہانزیب مسعود چیمہ‘ ڈاکٹر احسن لطیف اور ڈاکٹر حماد احمد کے ہمراہ ریموٹ سینسنگ اور جی آئی ایس لیبارٹریوں کا دورہ بھی کیا اور جھنگ روڈ پر سنٹر کی مجوزہ سائٹ بھی دیکھی۔

 

Copyright:  Zaraimedia.com

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More