پاکستان ایگریکلچر

agriculture_in_pakistanیونیورسٹی آف ویٹرنری اینڈ اینمل سائنسز لاہور ، زرعی میڈیا ڈاٹ کام ، پاکستان ایگریکلچر ، لائیوسٹاک اوپینین، پاکستان پولٹری ایسوسی ایشن ، پاکستان ویٹرنری میڈیکل ایسوسی ایشن ، دی ورلڈز پولٹری سائنس ایسوسی ایشن ، ویٹرنری نیوز اینڈ ویوز کے ادارے مستقبل میں لائیوسٹاک اور پولٹری سیکٹر میں تحقیق و توسیع میں پیدا ہونے والے عملی مسائل اور ان کے حل کے لیے مختلف مذاکروں ، سیمیناروں اور آگاہی پروگراموں کا انعقاد کریں گے

لاہور (نیوز ویوز سروس) یونیورسٹی آف ویٹرنری اینڈ اینمل سائنسز لاہور ، زرعی میڈیا ڈاٹ کام ، پاکستان ایگریکلچر ، لائیوسٹاک اوپینین، پاکستان پولٹری ایسوسی ایشن ، پاکستان ویٹرنری میڈیکل ایسوسی ایشن ، دی ورلڈز پولٹری سائنس ایسوسی ایشن ، ویٹرنری نیوز اینڈ ویوز کے ادارے مستقبل میں لائیوسٹاک اور پولٹری سیکٹر میں تحقیق و توسیع میں پیدا ہونے والے عملی مسائل اور ان کے حل کے لیے مختلف مذاکروں ، سیمیناروں اور آگاہی پروگراموں کا انعقاد کریں گے۔ اس بات کا فیصلہ ایک اجلاس میں کیا گیا جس کی صدارت وائس چانسلر یونیورسٹی آف ویٹرنری اینڈ اینمل سائنسز لاہور پروفیسر ڈاکٹر طلعت نصیر پاشا نے کی۔ اجلاس میں زرعی میڈیا ڈاٹ کام کے چیف ایگزیکٹیو ہفت روزہ ویٹرنری نیوز اینڈ ویوز کے چیف ایڈیٹر و پاکستان پولٹری ایسوسی ایشن اور پاکستان ویٹرنری میڈیکل کونسل کی پریس ، پبلیکیشن اینڈ انفارمیشن ٹیکنالوجی اسٹینڈنگ کمیٹی کے کنوینئر ڈاکٹر خالد محمود شوق ، معروف کالم نگار جنگ گروپ آف نیوز پیپر ڈاکٹر افتخار حسین بخاری ، انٹرنیشنل لائیوسٹاک ، پولٹری ، ڈیری کانگریس 2013 کے سیکرٹری و ایگری پروم گروپ کے صدر ڈاکٹر عاصم محمود خاں نے شرکت کی۔ اجلاس میں (جو 10 جنوری کو وائس چانسلر سیکرٹریٹ لاہور میں منعقد ہوا ) پولٹری کو درپیش مختلف مسائل کا جائزہ لیا گیا اور فیصلہ کیا گیا کہ معاشرے کے اہم طبقات کو پولٹری کی صنعت کے متعلق آگاہی دینے کے لیے سب سے پہلے لاہور میں میڈیکل ڈاکٹرز کے لیے سیمینار کا انعقاد کیا جائے گا اور ان کو پولٹری کی مصنوعات کی اہمیت اور انسانی صحت میں اس کے کردار کے متعلق مختلف پہلوؤں سے آگاہی دی جائے گی ، تاکہ عام لوگوں اور معاشرے کے ان طبقات میں ان خیالات کی حوصلہ شکنی کی جائے جو عدم آگاہی اور معلومات کی عدم دستیابی کے باعث پولٹری مصنوعات کی تیاری میں پھیلائے جارہے ہیں جس سے عام لوگوں میں بھی غلط تاثر پیدا ہوتا ہے اور ملک کی معیشت بھی ہل کر رہ جاتی ہے ۔ حالانکہ پولٹری فارمنگ میں اعلیٰ درجے کی تحقیق کے باعث ہمیشہ ایسی خوراک اور نگہداشت کو ترجیح دی جاتی ہے جس سے مرغیاں کم وقت میں کم خوراک کھا کر زیادہ وزن پیدا کریں تاکہ ملک و قوم کو جہاں حیواناتی لحمیات کی سستے داموں فراہمی ہو سکے وہاں قوم و ملک کی معاشی خوشحالی بھی بڑھائی جا سکے۔ اجلاس میں ڈیری کے شعبہ میں ہونے والی حالیہ پیش رفت پر بھی اطمینان کا اظہار کیا گیا اور اس بات پر زور دیا گیا کہ ڈیری کی صنعت میں ہونے والی جدید تبدیلیوں کے متعلق بھی ماہرین اور تحقیق دانوں اور کاروباری اداروں کا آگاہی دی جائے تاکہ مستقبل میں پیدا ہونے والے مسائل کا عملی حل تلاش کیا جا سکے۔
ڈاکٹر عاصم محمود خاں نے اس موقع پر بتایا کہ ان کا ادارہ ایگری پروم جلد ہی ڈیری کی صنعت کے متعلق ایک قومی سیمینار کا انعقاد کر رہا ہے جس میں غیر ملکی ماہرین اور ویٹرنری سائنسدان شریک ہونگے۔

ڈاکٹر خالد محمود شوق نے بتایا کہ کمیونیکیشن کے شعبہ میں تیزی سے پیش رفت کے لیے زرعی میڈیا ڈاٹ کام کی پورٹل کا آغاز کر دیا گیا ہے جس کو ایگری کلچر و لائیوسٹاک کی صنعتوں کے متعلق معلومات سے اپ ڈیٹ کیا جا رہا ہے ، یہ ویب سائٹ مستقبل میں معلومات کا ایک بہت بڑا میگا سٹور ثابت ہو گی ۔ ڈاکٹر خالد محمود شوق نے بتایا کہ ہماری کوشش ہے کہ اگلے سال زرعی میڈیا ڈاٹ کام سعودی عرب میں ہونے والے ایگری میڈیا شو میں ایوارڈ حاصل کرے۔ جنگ گروپ آف نیوز پیپر کے معروف کالم نگار ڈاکٹر افتخار حسین بخاری نے اس امر پر زور دیا کہ ایسے پروگرام اور مذاکرے ہمیں الحمراء آرٹ کونسل و دیگر ایسے نمایاں مقامات و اداروں میں منعقد کرنے چاہیں جہاں پر معاشرے کے عام طبقات با آسانی کھلے ذہن کے ساتھ شریک ہو سکیں۔
اجلاس میں فیصلہ کیا گیا کہ درج بالا نکات پر عمل درآمد کے لیے جلد ہی ایک وسیع تر اجلاس یونیورسٹی آف ویٹرنری اینڈ اینمل سائنسز لاہور میں بلایا جائے گا ۔
بعد ازاں ڈائریکٹر بزنس انکوبیشن سنٹر ڈاکٹر ارشد ہاشمی اور معروف سائنسدان پروفیسر ڈاکٹر محمد نسیم سے بھی ملاقات کی گئی اور اس پیش رفت سے آگاہی دی گئی ۔

Copyright:  Zaraimedia.com

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More