زرعی یونیورسٹی فیصل آباد

5

 جنوری 2013

غیرملکی طلباء کا داخلے کے لئے رجحان میں اضافہ
غیرملکی طلباء کا داخلے کے لئے رجحان میں اضافہ

فیصل آباد ( ) بین الاقوامی رینکنگ میں آنے کے بعد زرعی یونیورسٹی فیصل آباد میں غیرملکی طلباء کا داخلے کے لئے رجحان میں اضافہ دیکھنے میں آیا ہے یہی وجہ ہے کہ پہلی مرتبہ موجودہ تعلیمی سال میں 16غیرملکی طلباء میں سے نئے داخلہ لینے والے طلباء میں 2امریکی اور 2کینیڈین بھی شامل ہیں۔ ان باتوں کا اظہار یونیورسٹی کے وائس چانسلر پروفیسر ڈاکٹر اقرار احمد خاں نے انٹرنیشنل کلب کے زیراہتمام سالانہ تقریب سے بطور مہمان خصوصی اپنے خطاب کے دوران کیا۔ انہوں نے کہا کہ جامعہ زرعیہ فیصل آباد اپنے تعلیمی و تحقیقی معیار کو دنیا کی بہترین یونیورسٹیوں سے ہم آہنگ کرنے اور نئی اختراعات اپنانے میں انتہائی لچک کا مظاہرہ کر رہی ہے جس کی وجہ سے بین الاقوامی سطح پر نہ صرف اس کی درجہ بندی میں اضافہ دیکھنے میں آیا ہے بلکہ یہاں غیرملکی طلباء کی بڑی تعداد داخلے کے لئے رجوع کر رہی ہے۔ ڈاکٹر اقرار احمد خاں نے کہا کہ دنیا ایک گلوبل ویلج کا روپ اختیار کرنے کے بعد علم اور تحقیق کی سرحدوں کو سمیٹ رہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ آنے والے سالوں میں مغرب اور مشرق کے مابین پائی جانے والی سائنس و ٹیکنالوجی کی خلیج انتہائی کم ہو جائے گی۔ انہوں نے کہا کہ موجودہ صدی میں ایشیائی ممالک علمی سطح پر جو کامیابیاں حاصل کر رہے ہیں اس سے ظاہر ہوتا ہے کہ آئندہ چند دہائیوں میں دنیا کا یہ خطہ باقی تمام براعظموں کو پیچھے چھوڑ جائے گا۔ پرنسپل آفیسر امورطلباء پروفیسر ڈاکٹر محمد یونس نے کہا کہ جامعہ زرعیہ ہمیشہ سے ہی عالم اسلام کے ممالک کے لئے بالخصوص اور دیگر ملکوں کے لئے بالعموم علم کی پیاس بجھانے کے حوالے سے پسندیدہ جامعہ کے طور پر اپنی شہرت رکھتی ہے تاہم امن و امان کی صورتحال میں ابتری کے باعث پاکستان کے بارے میں کئے جانے والے غیرملکی پروپیگنڈے کے باعث زیادہ تعداد میں طلباء داخلے کے لئے رجوع نہیں کر رہے۔ انٹرنیشنل کلب کے فارن سٹوڈنٹ ایڈوائزر پروفیسر ڈاکٹر محمد طاہر صدیقی نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ اب پاکستان میں بڑی تعداد میں افغان طلباء انڈرگریجویٹ اور پوسٹ گریجویٹ تعلیمی پروگراموں میں داخلہ لے رہے ہیں جبکہ افریقی ممالک سے بھی نوجوان یہاں تعلیم کے لئے آتے ہیں۔ انہوں نے کہاکہ گذشتہ چار سالوں کے دوران بین الاقوامیت کے ایجنڈے کی وجہ سے نہ صرف امریکی اور کینیڈین طلباء یہاں داخلے کے لئے دلچسپی لے رہے ہیں بلکہ مختصر دورانیے کی تعلیمی و تحقیقی پیش رفت کے لئے نیوزی لینڈ، آسٹریلیا اور جرمنی کی طالبات بھی یہاں آ چکی ہیں۔ تقریب کے دوران افغانستان میں اسلامک میڈیکل ویلفیئر ایسوسی ایشن کے نمائندے کے علاوہ انٹرنیشنل کلب کے نئے عہدیداران نے بھی خطاب کیا۔

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More